• صارفین کی تعداد :
  • 925
  • 9/28/2017
  • تاريخ :

 

عقيدہ مہدويت كا آغاز

عقیدہ مہدویت کا آغاز

 

ڈاكٹر: اسلامى معاشرہ ميں عقيدہ مہدى كب داخل ہوا؟ كيا پيغمبراسلام كے زمانہ ميں بھى اس كا تذكرہ ملتا ہے يا اس عقيدہ نے آپكى رحلت كے بعد مسلمانوں كے درميان شہرت پائي ہے ؟ بعض صاحبان قلم نے لكھا ہے كہ : صدر اسلام ميں اس عقيدہ كا كہيں نام و نشان نہيں تھا _

ايك جماعت محمد بن حنفيہ كو مہدى كہتى ہے اور ان كے ذريعہ اسلام كے ارتقاء كى خوش خبرى سنائي اور جب ان كاانتقال ہوگيا تو كہا: وہ مرے نہيں ہيں بلكہ رضوى نامى پہاڑ ميں چلے گئے اور ايك دن ظہور كريں گے _

 

ہوشيار: عقيدہ مہدى صدر اسلام ہى سے مسلمانوں كے درميان مشہور تھا اور پيغمبر اسلام (ص) نے ايك بار نہيں بلكہ بار بار مہدى كے وجود كى خبر دى اور كبھى تو امام مہدى كى حكومت اور ان كے اسم و كنيت كو بھى بيان كرتے تھے _

اس سلسلے ميں آپ (ص) نے جو احاديث بيان فرمائي ہيں وہ شيعہ و سنى طريقوں سے ہم تك پہنچى ہيں ، اور توا تر كى حد كو پہنچى ہوئي ہيں ، ان ميں سے چند نمونے كے طور پر آپ كے سامنے پيش كرتا ہوں :

عبداللہ بن مسعود نے پيغمبر اكرم (ص) سے روايت كى ہے كہ آپ (ص) نے فرمايا: '' اس وقت تك دنيا كا خاتمہ نہ ہوگا جب تك ميرے اہل بيت سے مہدى نام كا ايك شخص لوگوں پر حكومت نہيں كرے گا ''_ (1)

ابوالجحاف نے بيان كيا ہے كہ رسول خدا نے تين مرتبہ فرمايا: '' ميں تمہيں مہدى كى بشارت ديتا ہوں _ جب لوگوں ميں شديد اختلاف ہوگا اور سخت مشكلوں ميں گھرے ہوں گے اور زمين ظلم و جور سے بھر چكى ہوگى اس وقت ظہور كريں گے اور زمين كو عدل و انصاف سے پر كريں گے اور اپنے پيروكاروں كے دلوں كو عبادت اور عدل گسترى كے جذبہ سے بھرديں گے '' ( 2)_

آپ (ص) ہى كا ارشاد ہے :'' اس وقت تك قيامت بر پا نہ ہوگى جب تك ہمارا برحق قائم قيام نہ كرے گا _ جب خدا حكم دے گا تو ظہور كرے گا _ جو شخص ان كى پيروى كرے گا ، نجات پائے گا اور جوروگردانى كرے گا ، وہ ہلاك ہوجائے گا _ خدا كے بندو خدا پر نظر ركھوجب بھى مہدى (عج) كا ظہور ہو تو فوراً ان كى طرف دوڑو اگر تمہيں برف كے اوپر ہى سے چل كرجانا پڑے كيونكہ وہ خليفة اللہ ہيں '' (3)

آپ (ص) ہى نے فرماياہے :'' جو ميرے بيٹے قائم كا انكار كرے گويا اس نے ميرا انكار كيا ہے '' (4) نيز فرمايا :'' دنيا اس وقت تك ختم نہيں ہوگى جب تك حسين (ع) كى اولاد ميں سے ايك شخص ميرى امت كا حاكم نہ ہوگا جو كہ دنيا كو اس طرح عدل و انصاف سے پركرے گا جيسے وہ ظلم و جور سے بھرچكى ہوگي'' (5)

 

مہدى (ص) عترت نبى (ص) سے ہيں

ايسى احاديث بہت زيادہ ہيں بلكہ ان ميں سے اكثر سے يہ بات سمجھ ميں آتى ہے كہ حضرت امام مہدى اور قائم كا موضوع زمانہ رسول (ص) ميں ايك مسلم عقيدہ تھا اور آپ (ص) مسلمانوں كے سامنے كسى نئي خبر كے عنوان سے پيش نہيں كرتے تھے بلكہ ان كے آثار و علامتيںبيان كرتے تھے اور فرماتے تھے:'' مہدى اور قائم ميرى عترت سے ہوگا '' _

 

حضرت على بن ابى طالب فرماتے ہيں :'' ميں نے رسول (ص) خدا كى خدمت ميں عرض كى : كيا مہدى موعود ہم ميں سے ہوگا يا ہمارے غيرميں سے ؟ فرمايا : ہم ميں سے ہوگا _ ان ہى كے ذريعہ خدا دين كو تمام كرے گا جيسا كہ اس كى ابتداء ميرے ہاتھ سے ہوئي ہے ، اور ہمارے ذريعہ لوگ فتنوں سے نجات پائيں گے جيسا كہ ہمارے ہى وسيلہ سے شرك سے نجات پائي ہے ہمارے طفيل ميں خدا انكے دلوں سے پرانى كدور تين ختم كرے گا جيسا كہ اس نے شرك و بت پرستى كے زمانہ كى دشمنى كے بعد دين ميں انھيں باہم مہربان بناديا ہے اور وہ ايك دوسرے كے بھائي بن گئي ہيں '' _(6)

ابو سعيد خدرى كہتے ہيں :'' ميں نے سنا كہ رسول(ص) نے بالائے منبر سے فرمايا : مہدى موعود ميرے اہل بيت سے ہوگا ، آخرى زمانہ ميں ظہور كرے گا ، آسمان ان كے لئے بارش برسائے گا اور زمين سبزہ اگائے گى ، وہ زمين كو ايسے ہى عدل و انصاف سے پركريں گے جيسا كہ وہ ظلم و جور سے بھر چكى ہوگي''_ (7)

ام سلمہ كہتى ہيں كہ ميں نے رسول (ص) خدا سے سنا كہ آپ (ص) نے فرمايا: '' مہدى ميرى عترت اور اولاد فاطمہ (ع) سے ہوگا ''_(8)

رسول خدا (ص) نے فرمايا :'' قائم ميرى ذريت سے ہوگا، اس كا نام ميرا نام ، اس كى كنيت ميرى كنيت اور اس كى عادت ميرى عادت ہے _ وہ لوگوں كو ميرے دين و مذہب اور كتاب خدا كى طرف بلائے گا_ جس نے اس كى اطاعت كى اس نے ميرى اطاعت كى اور جس نے اس كى نافرمانى كى اس نے ميرى نافرمانى كي_ جس نے س كى غيبت كے زمانہ ميں اس كا انكار كيا اس نے ميرا انكار كيا جس نے اس كى تكذيت كى اس نے ميرے تكذيب كى ، جس نے اس كى تصديق كى اس نے ميرى تصديق كى _ او رميں اسكى تكذيب كرنے والے اور اس كے بارے ميں اپنى حديث كے انكار كرنے والے اور امت كو گمراہ كرنے والے كى خدا سے شكايت كروں گا _ ظالم عنقريب اپنے لئے كا نتيجہ ديكھ ليں گے '' (9)

ابو ايوب انصارى كہتے ہيں كہ ميں نے رسول (ص) خدا كو فرماتے ہوئے سنا كہ آپ (ع) نے فرمايا : '' ميں پيغمبروں كا سردار ہوں اور على (ع) اوصياء كے سردار ہيں اور ميرے دو بيٹے بہترين بيٹے ہيں _ ہمارے معصوم ائمہ حسين (ع) كى اولاد سے ہوں گے اور اس امت كا مہدى ہم ميں سے ہوگا'' يہ سن كر ايك صحرا نشين شخص اٹھا اور عرض كى :'' اے اللہ كے رسول (ص) آپ (ع) كے بعد كتنے امام ہوں گے ؟ فرمايا: ''جتنے عيسى كے حوارى ، بنى اسرائيل كے نقباء اور اسباط تھے'' (10)

 

حذيفہ نے روايت كى ہے كہ رسول (ص) خدا نے فرمايا :'' ميرے بعد اتنے ہى امام ہوں گے جتنے بنى اسرائيل كے نقباء تھے_ ان ميں سے نو حسين كى نسل سے ہوں گے او راس امت كا مہدى ہم ميں سے ہوگا _ آگاہ ہوجاؤ وہ حق كے ساتھ ہيں اور حق ان كے ساتھ ہے _ ديكھو ميرے بعد ان كے ساتھ كيسا سلوك كروگے ''_ (11)

سعيد بن مسيب نے عمر اور عثمان بن عفان سے روايت كى ہے كہ انہوں نے كہا:'' ہم نے رسول (ص) خدا سے سنا ہے كہ آپ (ص) نے فرمايا: ميرے بعد بارہ امام ہوں گے _ ان ميں سے نو حسين (ع) كى اولاد ميں سے ہوں گے اور اس امت كا مہدى ہم ميں سے ہوگا _ ميرے بعد جو بھى ان سے تمسك كرے وہ يقينا خدا كى مضبوط رسى كو تھام لے گا او رجو انھيں چھوڑ دے گا وہ خدا كو چھوڑ دے گا ''_ (12)

 

 

1_ بحار الانوار طبع اسلاميہ سنہ 1384 ھ ج 51 ص 75 _ اثبات الہداة ط 1 ج 7 ص 9 _

2_ بحار الانوار ج 51 ص 74_

3_ بحار الانوار ج 51 ص 65 و اثبات الہداة ج 6 ص 282_

4_ بحارالانوار ج 51 ص 73_

5_ بحارالانوار ج 51 ص 66_

6_ بحارالانوار ج 51 ص 84و اثبات الہداة ج 7 ص 191 و مجمع الزوائد تأليف على بن ابى بكر ہيثمى ط قاہرہ ج 7 ص 1317_

7_ بحارالانوار ج 51 ص 74و اثبات الہداة ج 7 ص 9_

8_ بحار ج 51 ص 75_

9_ بحار ج 51 ص 73_

10_ اثبات الہداة ج 2 ص 351_

11_ اثبات الہداة ج 2 ص 533_

12_ اثبات الہداة ج 2 ص 526_